بھروسہ مت کرو

بھروسہ مت کرو سانسوں کی ڈوری ٹوٹ جاتی ہے

چھتیں محفوظ رہتی ہیں حویلی ٹوٹ جاتی ہے

محبت بھی عجب شے ہے وہ جب پردیس میں روئے

تو فوراً ہاتھ کی ایک آدھ چوڑی ٹوٹ جاتی ہے

کہیں کوئی کلائی ایک چوڑی کو ترستی ہے

کہیں کنگن کے جھٹکے سے کلائی ٹوٹ جاتی ہے

لڑکپن میں کئے وعدے کی قیمت کچھ نہیں ہوتی

انگوٹھی ہاتھ میں رہتی ہے منگنی ٹوٹ جاتی ہے

کسی دن پیاس کے بارے میں اس سے پوچھیے جس کی

کنویں میں بالٹی رہتی ہے رسی ٹوٹ جاتی ہے

کبھی اک گرم آنسو کاٹ دیتا ہے چٹانوں کو

کبھی اک موم کے ٹکڑے سے چھینی ٹوٹ جاتی ہے

حیا گرتی ہوئی دیوار تھی

امیرالاسلام ہاشمی

حیا گرتی ہوئی دیوار تھی، کل شب جہاں میں تھا
نظر اُٹھنا بہت دشوار تھی، کل شب جہاں میں تھا

جنہیں ساڑھی میں آنا تھا وہ پتلونوں میں آئیں تھیں
تمیز مرد و زن دشوار تھی کل شب جہاں میں تھا

نظر کے کوفتے رخ کے پراٹھے وصل کے شربت
مکمل دعوت دیدار تھی کل شب جہاں میں تھا

زلیخائیں بضد تھیں ایک یوسف کے لیے یارو
بڑی ہی گرمیِ بازار تھی کل شب جہاں میں تھا

پلس سیون کا چشمہ فٹ کیے تھے دیدہ ور سارے
نظر اپنی بھی نمبر دار تھی کل شب جہاں میں تھا

تھرکنے ناچنے ٹھمکے لگانے کے تھے سب ماہر
ثقافت بر سرِ پیکار تھی کل شب جہاں میں تھا

ڈھکے تھے جسم نازک کے جو حصے ان کے اندر بھی
بلا کی حسرتِ اظہار تھی، کل شب جہاں میں تھا

جنابِ شیخ بھی پیاسے نظر آتے تھے شدت سے
طہارت بر سرِ پیکار تھی، کل شب جہاں میں تھا

کسی فرہاد کو حاجت نہ تھی تیشہ اُٹھانے کی
ہر اِک شیریں بیاں تلوار تھی کل شب جہاں میں تھا

حیا گرتی ہوئی دیوار تھی

امیرالاسلام ہاشمی

حیا گرتی ہوئی دیوار تھی، کل شب جہاں میں تھا
نظر اُٹھنا بہت دشوار تھی، کل شب جہاں میں تھا

جنہیں ساڑھی میں آنا تھا وہ پتلونوں میں آئیں تھیں
تمیز مرد و زن دشوار تھی کل شب جہاں میں تھا

نظر کے کوفتے رخ کے پراٹھے وصل کے شربت
مکمل دعوت دیدار تھی کل شب جہاں میں تھا

زلیخائیں بضد تھیں ایک یوسف کے لیے یارو
بڑی ہی گرمیِ بازار تھی کل شب جہاں میں تھا

پلس سیون کا چشمہ فٹ کیے تھے دیدہ ور سارے
نظر اپنی بھی نمبر دار تھی کل شب جہاں میں تھا

تھرکنے ناچنے ٹھمکے لگانے کے تھے سب ماہر
ثقافت بر سرِ پیکار تھی کل شب جہاں میں تھا

ڈھکے تھے جسم نازک کے جو حصے ان کے اندر بھی
بلا کی حسرتِ اظہار تھی، کل شب جہاں میں تھا

جنابِ شیخ بھی پیاسے نظر آتے تھے شدت سے
طہارت بر سرِ پیکار تھی، کل شب جہاں میں تھا

کسی فرہاد کو حاجت نہ تھی تیشہ اُٹھانے کی
ہر اِک شیریں بیاں تلوار تھی کل شب جہاں میں تھا

جب کبھی بولنا.

طاہر فراز

جب کبھی بولنا……….  وقت پر بولنا

مدتوں سوچنا،………….مختصر بولنا

ڈال دے گا ہلاکت میں ایک دن تمہیں

ائے پرندے ترا ……… شاخ پر بولنا

پہلے کچھ دور تک.. ساتھ چل کے پرکھ

پھر مجھے ہم سفر ………. ہم سفر بولنا

میری خانہ بدوشی ….. سے پوچھے کوئی

کتنا مشکل ہے رستے …….. کو گھر بولنا

عمر بھر کو مجھے ……… بے صدا کر گیا

تیرا اک بار منہ ………. پھیر کو بولنا

کیوں ہے خاموش …. سونے کی چڑیا بتا

لگ گئی تجھ کو کس …….. کی نظر بولنا

عمر بھر تجھ کو رکھے گا …….. گرمِ سفر

منزلوں کو ترے ……… رہ  گذر بولنا

پطرس بخاری اور کتا

پطرس بخاری

ﻋﻠﻢ ﺍﻟﺤﯿﻮﺍﻧﺎﺕ ﮐﮯ ﭘﺮﻭﻓﯿﺴﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ۔
ﺳﻠﻮﺗﺮﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﺩﺭﯾﺎﻓﺖ ﮐﯿﺎ۔ ﺧﻮﺩ ﺳﺮﮐﮭﭙﺎﺗﮯ
ﺭﮨﮯ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﮐﺒﮭﯽ ﺳﻤﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﺁﯾﺎ ﮐﮧ ﺁﺧﺮ
ﮐﺘﻮﮞ ﮐﺎﻓﺎﺋﺪﮦ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟ ﮔﺎﺋﮯ ﮐﻮ ﻟﯿﺠﺌﮯ ﺩﻭﺩﮪ
ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﺑﮑﺮﯼ ﮐﻮ ﻟﯿﺠﺌﮯ، ﺩﻭﺩﮪ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ
ﺍﻭﺭ ﻣﯿﻨﮕﻨﯿﺎﮞ ﺑﮭﯽ۔ ﯾﮧ ﮐﺘﮯ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ؟
ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﮯ ﮐﮧ ﮐﺘﺎ ﻭﻓﺎﺩﺍﺭ ﺟﺎﻧﻮﺭ ﮨﮯ۔ ﺍﺏ
ﺟﻨﺎﺏ ﻭﻓﺎﺩﺍﺭﯼ ﺍﮔﺮ ﺍﺳﯽ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺷﺎﻡ
ﮐﮯ ﺳﺎﺕ ﺑﺠﮯ ﺳﮯ ﺟﻮ ﺑﮭﻮﻧﮑﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ
ﻟﮕﺎﺗﺎﺭ ﺑﻐﯿﺮ ﺩﻡ ﻟﻴﮯ ﺻﺒﺢ ﮐﮯ ﭼﮫ ﺑﺠﮯ ﺗﮏ
ﺑﮭﻮﻧﮑﺘﮯ ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ۔ﺗﻮ ﮨﻢ ﻟﻨﮉﻭﺭﮮ ﮨﯽ ﺑﮭﻠﮯ،
ﮐﻞ ﮨﯽ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﯿﺎﺭﮦ
ﺑﺠﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﺘﮯ ﮐﯽ ﻃﺒﯿﻌﺖ ﺟﻮ ﺫﺭﺍ ﮔﺪﮔﺪﺍﺋﯽ
ﺗﻮ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﺳﮍﮎ ﭘﺮ ﺁﮐﺮ ﻃﺮﺡ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ
ﻣﺼﺮﻉ ﺩﮮ ﺩﯾﺎ۔ ﺍﯾﮏ ﺁﺩﮪ ﻣﻨﭧ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺳﺎﻣﻨﮯ
ﮐﮯ ﺑﻨﮕﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﮐﺘﮯ ﻧﮯ ﻣﻄﻠﻊ ﻋﺮﺽ
ﮐﺮﺩﯾﺎ۔ ﺍﺏ ﺟﻨﺎﺏ ﺍﯾﮏ ﮐﮩﻨﮧ ﻣﺸﻖ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﮐﻮ ﺟﻮ
ﻏﺼﮧ ﺁﯾﺎ، ﺍﯾﮏ ﺣﻠﻮﺍﺋﯽ ﮐﮯ ﭼﻮﻟﮩﮯ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ
ﺑﺎﮨﺮ ﻟﭙﮑﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﮭﻨﺎ ﮐﮯ ﭘﻮﺭﯼ ﻏﺰﻝ ﻣﻘﻄﻊ ﺗﮏ
ﮐﮩﮧ ﮔﺌﮯ۔ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺷﻤﺎﻝ ﻣﺸﺮﻕ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ
ﺍﯾﮏ ﻗﺪﺭ ﺷﻨﺎﺱ ﮐﺘﮯﻧﮯ ﺯﻭﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﺩﺍﺩ ﺩﯼ۔
ﺍﺏ ﺗﻮ ﺣﻀﺮﺕ ﻭﮦ ﻣﺸﺎﻋﺮﮦ ﮔﺮﻡ ﮨﻮﺍﮐﮧ ﮐﭽﮫ ﻧﮧ
ﭘﻮﭼﮭﺌﮯ، ﮐﻢ ﺑﺨﺖ ﺑﻌﺾ ﺗﻮ ﺩﻭ ﻏﺰﻟﮯ ﺳﮧ
ﻏﺰﻟﮯ ﻟﮑﮫ ﻻﺋﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﮐﺌﯽ ﺍﯾﮏ ﻧﮯ ﻓﯽ
ﺍﻟﺒﺪﯾﮩﮧ ﻗﺼﯿﺪﮮ ﮐﮯ ﻗﺼﯿﺪﮮ ﭘﮍﮪ ﮈﺍﻟﮯ، ﻭﮦ
ﮨﻨﮕﺎﻣﮧ ﮔﺮﻡ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﭨﮭﻨﮉﺍ ﮨﻮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﺁﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﮨﻢ ﻧﮯ ﮐﮭﮍﮐﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﺩﻓﻌﮧ ” ﺁﺭﮈﺭ
ﺁﺭﮈﺭ” ﭘﮑﺎﺭﺍ ﻟﯿﮑﻦ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﻮﻗﻌﻮﮞ ﭘﺮ ﭘﺮ
ﺩﮬﺎﻥ ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻨﺘﺎ۔ ﺍﺏ ﺍﻥ
ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﻮﭼﮭﺌﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﺎﮞ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ
ﺍﯾﺴﺎ ﮨﯽ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﻣﺸﺎﻋﺮﮦ ﮐﺮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﺩﺭﯾﺎ
ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﮐﮭﻠﯽ ﮨﻮﺍ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﮐﺮ ﻃﺒﻊ ﺁﺯﻣﺎﺋﯽ
ﮐﺮﺗﮯ ﯾﮧ ﮔﮭﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺁﮐﺮ ﺳﻮﺗﻮﮞ ﮐﻮ
ﺳﺘﺎﻧﺎ ﮐﻮﻥ ﺳﯽ ﺷﺮﺍﻓﺖ ﮨﮯ۔
ﺍﻭﺭﭘﮭﺮ ﮨﻢ ﺩﯾﺴﯽ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﮐﺘﮯ ﺑﮭﯽ ﮐﭽﮫ
ﻋﺠﯿﺐ ﺑﺪﺗﻤﯿﺰ ﻭﺍﻗﻊ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﮐﺜﺮ ﺗﻮ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ
ﺍﯾﺴﮯ ﻗﻮﻡ ﭘﺮﺳﺖ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﭘﺘﻠﻮﻥ ﮐﻮﭦ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮫ
ﮐﺮ ﺑﮭﻮﻧﮑﻨﮯ ﻟﮓ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺧﯿﺮ ﯾﮧ ﺗﻮ ﺍﯾﮏ ﺣﺪ
ﺗﮏ ﻗﺎﺑﻞ ﺗﻌﺮﯾﻒ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺫﮐﺮ ﮨﯽ
ﺟﺎﻧﮯ ﺩﯾﺠﯿﺌﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ
ﯾﻌﻨﯽ ﮨﻤﯿﮟ ﺑﺎﺭﮨﺎ ﮈﺍﻟﯿﺎﮞ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺻﺎﺣﺐ ﻟﻮﮔﻮﮞ
ﮐﮯ ﺑﻨﮕﻠﻮﮞ ﭘﺮ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﺗﻔﺎﻕ ﮨﻮﺍ، ﺧﺪﺍ ﮐﯽ
ﻗﺴﻢ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮐﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺷﺎﺋﺴﺘﮕﯽ ﺩﯾﮑﮭﯽ
ﮨﮯ ﮐﮧ ﻋﺶ ﻋﺶ ﮐﺮﺗﮯ ﻟﻮﭦ ﺁﺋﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﻮﮞ
ﮨﯽ ﮨﻢ ﺑﻨﮕﻠﮯ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﺘﮯ ﻧﮯ
ﺑﺮﺁﻣﺪﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﮍﮮ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﯽ ﺍﯾﮏ ﮨﻠﮑﯽ
ﺳﯽ ” ﺑﺦ ” ﮐﺮﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﻨﮧ ﺑﻨﺪ ﮐﺮﮐﮯ ﮐﮭﮍﺍ
ﮨﻮﮔﯿﺎ۔ﮨﻢ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮬﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﭼﺎﺭ ﻗﺪﻡ
ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﻧﺎﺯﮎ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﮐﯿﺰﮦ ﺁﻭﺍﺯ ﻣﯿﮟ
ﭘﮭﺮ ” ﺑﺦ ” ﮐﺮﺩﯼ۔ ﭼﻮﮐﯿﺪﺍﺭﯼ ﮐﯽ ﭼﻮﮐﯿﺪﺍﺭﯼ
ﻣﻮﺳﯿﻘﯽ ﮐﯽ ﻣﻮﺳﯿﻘﯽ۔ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮐﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ
ﻧﮧ ﺭﺍﮒ ﻧﮧ ﺳُﺮ۔ ﻧﮧ ﺳﺮ ﻧﮧ ﭘﯿﺮ۔ ﺗﺎﻥ ﭘﮧ ﺗﺎﻥ
ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﺑﮯﺗﺎﻟﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﮐﮯ ﻧﮧ ﻣﻮﻗﻊ
ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﻧﮧ ﻭﻗﺖ ﭘﮩﭽﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﮔﻞ ﺑﺎﺯﯼ
ﮐﻴﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﮔﮭﻤﻨﮉ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﺎﻥ
ﺳﯿﻦ ﺍﺳﯽ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ۔
ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺷﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺗﻌﻠﻘﺎﺕ ﮐﺘﻮﮞ
ﺳﮯ ﺫﺭﺍ ﮐﺸﯿﺪﮦ ﮨﯽ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﮨﻢ ﺳﮯ
ﻗﺴﻢ ﻟﮯ ﻟﯿﺠﯿﺌﮯ ﺟﻮ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮ ﮨﻢ ﻧﮯ
ﮐﺒﮭﯽ ﺳﯿﺘﺎ ﮔﺮﯼ ﺳﮯ ﻣﻨﮧ ﻣﻮﮌﺍ ﮨﻮ۔ ﺷﺎﯾﺪ ﺁﭖ
ﺍﺱ ﮐﻮ ﺗﻌﻠّﯽ ﺳﻤﺠﮭﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺧﺪﺍ ﺷﺎﮨﺪ ﮨﮯ ﮐﮧ
ﺁﺝ ﺗﮏ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﮐﺘﮯ ﭘﺮ ﮨﺎﺗﮫ ﺍُﭨﮫ ﮨﯽ ﻧﮧ
ﺳﮑﺎ۔ ﺍﮐﺜﺮ ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﻧﮯ ﺻﻼﺡ ﺩﯼ ﮐﮧ ﺭﺍﺕ
ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﻻﭨﮭﯽ ﭼﮭﮍﯼ ﺿﺮﻭﺭ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮭﻨﯽ
ﭼﺎﮨﯿﺌﮯ ﮐﮧ ﺩﺍﻓﻊ ﺑﻠﯿﺎﺕ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﮨﻢ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ
ﺧﻮﺍﮦ ﻣﺨﻮﺍﮦ ﻋﺪﺍﻭﺕ ﭘﯿﺪﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ۔
ﮐﺘﮯ ﮐﮯ ﺑﮭﻮﻧﮑﺘﮯ ﮨﯽ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻃﺒﻌﯽ ﺷﺮﺍﻓﺖ
ﮨﻢ ﭘﺮ ﺍﺱ ﺩﺭﺟﮧ ﻏﻠﺒﮧ ﭘﺎ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺁﭖ ﺍﮔﺮ
ﮨﻤﯿﮟ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﺗﻮ ﯾﻘﯿﻨﺎً ﯾﮩﯽ ﺳﻤﺠﮭﯿﮟ
ﮔﮯ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺑﺰﺩﻝ ﮨﯿﮟ۔ ﺷﺎﯾﺪ ﺁﭖ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﯾﮧ
ﺑﮭﯽ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﻟﮕﺎ ﻟﯿﮟ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﮔﻼ ﺧﺸﮏ ﮨﻮﺍ
ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺍﻟﺒﺘﮧ ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮ
ﮐﺒﮭﯽ ﮔﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﻭﮞ ﺗﻮ ﮐﮭﺮﺝ ﮐﮯ
ﺳُﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺳﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﻧﮑﻠﺘﺎ۔ ﺍﮔﺮ ﺁﭖ
ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﮨﻢ ﺟﯿﺴﯽ ﻃﺒﯿﻌﺖ ﭘﺎﺋﯽ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺁﭖ
ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﮧ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮ ﺁﯾﺖ ﺍﻟﮑﺮﺳﯽ
ﺁﭖ ﮐﮯ ﺫﮨﻦ ﺳﮯ ﺍُﺗﺮ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺟﮕﮧ
ﺁﭖ ﺷﺎﯾﺪ ﺩﻋﺎﺋﮯ ﻗﻨﻮﺕ ﭘﮍﮬﻨﮯ ﻟﮓ ﺟﺎﺋﯿﮟ