ﻣﯿﺮﮮ ﮬﻤﺴﻔﺮ ﺗﺠﮭﮯ ﮐﯿﺎ ﺧﺒﺮ

ﻣﯿﺮﮮ ﮬﻤﺴﻔﺮ ﺗﺠﮭﮯ ﮐﯿﺎ ﺧﺒﺮ
ﯾﮧ ﺟﻮ ﻭﻗﺖ ﮬﮯ ﮐﺴﯽ ﺩﮬﻮﭖ ﭼﮭﺎﺅﮞ ﮐﮯ ﮐﮭﯿﻞ ﺳﺎ
ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ، ﺍﺳﮯ ﺟﮭﯿﻠﺘﮯ
ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮫ ﮔﺮﺩ ﺳﮯ ﺍﭦ ﮔﺌﯽ
ﻣﯿﺮﮮ ﺧﻮﺍﺏ ﺭﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﻮ ﮔﺌﮯ
ﻣﯿﺮﮮ ﮨﺎﺗﮫ ﺑﺮﻑ ﺳﮯ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ
ﻣﯿﺮﮮ ﺑﮯ ﺧﺒﺮ، ﺗﯿﺮﮮ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﭘﮭﻮﻝ ﮐﮭﻠﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﮨﻮﻧﭧ ﭘﺮ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﺩﯾﭗ ﺟﻠﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺑﺎﻡ ﭘﺮ
ﻭﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﮯ ۔۔۔۔ﻭﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﮯ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﺍﯾﮏ ﺭﺑﻂ ﺗﮭﺎ ﺩﺭﻣﯿﺎﮞ
ﻭﮦ ﺑﮑﮭﺮ ﮔﯿﺎ۔۔۔
ﻭﮦ ﮨﻮﺍ ﭼﻠﯽ
ﮐﺴﯽ ﺷﺎﻡ ﺍﯾﺴﯽ ﮨﻮﺍ ﭼﻠﯽ
ﮐﮧ ﺟﻮ ﺑﺮﮒ ﺗﮭﮯ ﺳﺮ ﺷﺎﺥ ﺟﺎﮞ
ﻭﮦ ﮔﺮﺍ ﺩﺋﯿﮯ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﺣﺮﻑ ﺩﺷﺖ ﺗﮭﮯ ﺭﯾﺖ ﭘﺮ
ﻭﮦ ﺍﮌﺍ ﺩﺋﯿﮯ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﺭﺍﺳﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﯾﻘﯿﮟ ﺗﮭﮯ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﻣﻨﺰﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﻣﯿﮟ ﺗﮭﮯ
ﻭﮦ ﻧﺸﺎﻥ ِ ﭘﺎ ﺑﮭﯽ ﻣﭩﺎ ﺩﺋﯿﮯ
ﻣﯿﺮﮮ ﮨﻤﺴﻔﺮ ﮨﮯ ﻭﮨﯽ ﺳﻔﺮ ﻣﮕﺮ ﺍﯾﮏ ﻣﻮﮌ ﮐﮯ ﻓﺮﻕ
ﺳﮯ
ﺗﯿﺮﮮ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﮮ
ﮨﺎﺗﮫ ﺗﮏ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﮨﺎﺗﮫ ﺑﮭﺮ ﮐﺎ ﺗﮭﺎ ﻓﺎﺻﻠﮧ
ﮐﺌﯽ ﻣﻮﺳﻤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﺪﻝ ﮔﯿﺎ
ﺍﺳﮯ ﻧﺎﭘﺘﮯ، ﺍﺳﮯ ﮐﺎﭨﺘﮯ
ﻣﯿﺮﺍ ﺳﺎﺭﺍ ﻭﻗﺖ ﻧﮑﻞ ﮔﯿﺎ
ﺗﻮ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﻔﺮ ﮐﺎ ﺷﺮﯾﮏ ﮬﮯ
ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﮮ ﺳﻔﺮ ﮐﺎ ﺷﺮﯾﮏ ﮬﻮﮞ
ﺗﮭﮯ ﺟﻮ ﺩﺭﻣﯿﺎﮞ ﺳﮯ ﻧﮑﻞ ﮔﯿﺎ
ﮐﺴﯽ ﻓﺎﺻﻠﮯ ﮐﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﺳﮯ
ﮐﺴﯽ ﺑﮯ ﯾﻘﯿﮟ ﺳﮯ ﻏﺒﺎﺭ ﺳﮯ
ﮐﺴﯽ ﺭﮦ ﮔﺰﺭ ﮐﮯ ﺣﺼﺎﺭ ﻣﯿﮟ
ﺗﯿﺮﺍ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﮬﮯ
!ﻣﯿﺮﺍ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﮬﮯ

یہ جو مُجھ پر نکھار ھے، سائیں

یہ جو مُجھ پر نکھار ھے، سائیں!!
آپ ھی کی بہار ھے، سائیں____
آپ چاھیں تو جان بھی لے لیں
آپ کو اختیار ھے، سائیں____
تُم مِلاتے ھو بچھڑے لوگوں کو
ایک میرا بھی یار ھے، سائیں
کسی کھونٹی سے باندھ دیجے اِسے
دل بڑا بے مُہار ھے، سائیں_______
عشق میں لغزشوں پہ کیجے مُعَاف
سائیں ! یہ پہلی بار ھے، سائیں
کُل مِلا کر ھے جو بھی کچھ میرا
آپ سے مُستَعار ھے، سائیں____
ایک کشتی بنا ھی دیجے مُجھے
کوئی دریا کے پار ھے، سائیں
روز آنسُو کما کے لاتا ھُوں
غم مرا روزگار ھے، سائیں
وُسعتِ رزق کی دُعا دیجے
درد کا کاروبار ھے، سائیں
خار زاروں سے ھو کے آیا ھُوں
پیرھن تار تار ھے، سائیں___
کبھی آکر تو دیکھیے کہ یہ دل
کیسا اُجڑا دیار ھے، سائیں__!!!

عقل سے ذات ، ماوَرا اُس کی

حُور و جنت تو ’’ ضمنی ‘‘ بات تھی دوست
کاش تم مانگتے رِضا اُس کی
******************************
عقل سے ذات ، ماوَرا اُس کی
کیا لکھے گا ، قلم ثنا اُس کی

ذَرّے ذَرّے کا دائمی حاکم
آگ ، مِٹّی ، پَوَن ، گھٹا اُس کی

تحفے میں اُس کو کچھ بھی دے نہ سکا
جو بھی سوچا تھا ، تھی عطا اُس کی

ہم فقیروں کا کیا ہے دُنیا میں
حتی کہ طاقتِ دُعا اُس کی !

مامتا جس کی ’’ ایک ‘‘ نعمت ہے
دِل مرے حمد تو سنا اُس کی

’’ اَللہ شافی ‘‘ کا معنی یہ ہے دوست !
ہر مرض میرا ، ہر شفا اُس کی

سرفرازی کو ، عمر بھر ترسا
سر جو چوکھٹ پہ نہ جھکا اُس کی

ایک پتھر نے ، آدمی سے کہا
تُو بھی کچھ حمد گنگنا اُس کی

دَھڑکنوں سے لطیف نغمہ تھا
دِل نے سننے نہ دی صدا اُس کی

حُور و جنت تو ’’ ضمنی ‘‘ بات تھی دوست
کاش تم مانگتے رِضا اُس کی

شرم کر کچھ گناہ کرنے میں
قیس بخشش نہ آزما اُس کی !

شہزاد قیس کی کتاب "اِلہام” سے انتخاب

مسلمانوں کے نام ایک غیر مسلم شاعر کا پیغام 

مسلمانوں کے نام ایک غیر مسلم شاعر کا پیغام 

ایک  ہی  پربھو  کی  پوجا  ہم  اگر کرتے  نہیں
ایک ہی در پر مگر  سر آپ  بھی  دھرتے  نہیں

اپنی   سجد ہ گاہ  دیوی  کا  اگر  استھان  ہے
آپ کے سجدوں کا مرکز  قبر جو  بے جان  ہے

اپنے معبودوں کی  گنتی  ہم  اگر رکھتے نہیں
آپ کے مشکل کشاؤں کو بھی گن سکتے نہیں

’’جتنے  کنکر  اتنے  شنکر‘‘ یہ اگر مشہور ہے
ساری  درگاہوں  پہ سجدہ  آپ  کا  دستور  ہے

اپنے  دیوی   دیوتاؤں   کو    اگر   ہے   اختیار
آپ  کے  ولیوں  کی  طاقت  کا نہیں  حدوشمار

وقتِ مشکل  ہے  اگر  نعرہ  مرا  ’ بجرنگ بلی
آپ  بھی  وقتِ ضرورت  نعرہ  زن  ہیں  ’یاعلی‘

لیتا  ہے  اوتار   پربھو   جبکہ  اپنے  دیس  میں
آپ کہتے ہیں ’’خدا ہے مصطفٰے کے بھیس میں‘‘

جس  طرح  ہم  ہیں  بجاتے  مندروں  میں گھنٹیاں
تر بتوں  پر   آپ   کو    دیکھا   بجاتے ;   تالیاں

ہم  بھجن  کرتے  ہیں  گا کر  دیوتا  کی  خوبیاں
آپ  بھی  قبروں  پہ   گاتے   جھوم  کر  قوّالیاں

ہم  چڑھاتے ہیں بتوں  پر دودھ  یا پانی کی دھار
آپ  کو   دیکھا  چڑھاتے   مرغ   چادر ،   شاندار

بت  کی  پوجا  ہم  کریں،  ہم  کو  ملے’’نارِ سقر
آپ  پوجیں  قبر  تو  کیونکر  ملے; جنّت میں گھر؟

آپ مشرک، ہم بھی مشرک معاملہ جب صاف ہے
جنّتی  تم ، دوزخی  ہم ، یہ  کوئی  انصاف   ہے

مورتی  پتّھر  کی  پوجیں  گر ! تو  ہم  بدنام ہیں
آپ  :’’سنگِ نقش ِپا‘‘  پوجیں   تو  نیکو  نام  ہیں

کتنا  ملتا   جلتا   اپنا   آپ    سے    ایمان    ہے
آپ کہتے  ہیں مگر  ہم  کو   تو "بے ایمان”  ہے

شرکیہ  اعمال  سے  گر   غیر  مسلم  ہم  ہوئے
پھر  وہی  اعمال  کرکے آپ  کیوں  مسلم ہوئے

ہم  بھی  جنّت  میں  رہیں  گے  تم  اگر  ہو جنّتی
ورنہ  دوزخ  میں  ہمارے  ساتھ  ہوں گے آپ بھی

ہے  یہ  نیّر  کی  صدا سن لو  مسلماں  غور سے
اب  نہ  کہنا  دوزخی  ہم کو کسی بھی طور سے

(اوم پر کاش نیّر، لدھیانوی )

کیوں نہ ہم عہدِ رفاقت کو بھلانے لگ جائیں

کیوں نہ ہم عہدِ رفاقت کو بھلانے لگ جائیں
شاید اس زخم کو بھرنے میں زمانے لگ جائیں

نہیں ایسا بھی کہ اِک عمر کی قربت کے نشے
ایک دو روز کی رنجش سے ٹھکانے لگ جائیں

یہی ناصح جو ہمیں تجھ سے نہ ملنے کو کہیں
تجھ کو دیکھیں تو تجھے دیکھنے آنے لگ جائیں

ہم کہ ہیں لذتِ آزار کے مارے ہوئے لوگ
چارہ گر آئیں تو زخموں کو چھپانے لگ جائیں

ربط کے سینکڑوں حیلے ہیں ، محبت نہ سہی
ہم ترے ساتھ کسی اور بہانے لگ جائیں

ساقیا! مسجد و مکتب تو نہیں میخانہ
دیکھنا، پھر بھی غلط لوگ نہ آنے لگ جائیں

قرب اچھا ہے مگر اتنی بھی شدت سے نہ مل
یہ نہ ہو تجھ کو میرے روگ پرانے لگ جائیں

اب فراؔز آؤ چلیں اپنے قبیلے کی طرف
شاعری ترک کریں، بوجھ اٹھانے لگ جائیں