بے یار روزِعید، شبِ غَم سے کم نہیں

بے یار روزِعید،  شبِ غَم سے کم نہیں
جامِ شراب،  دِیدۂ پُرنَم سے کم نہیں

دیتا ہے دَورِ چرخ کسے فُرصتِ نِشاط
ہو جس کے پاس جام وہ اب جَم سے کم نہیں

اُس زُلفِ فتنہ زا کے لئے اے مسیح دم
کچھ دستِ شانہ پنجۂ مریَم سے کم نہیں

زیبا ہے رُوئے زرد پر کیا اشک لالہ گوں
اپنی خِزاں بہار کے موسَم سے کم نہیں

سُرعت ہے نبض کی رَگِ سنگِ مزار میں
دل کی تپش کچھ اب بھی تَپِ غَم سے کم نہیں

وحشی کو تِری چشم کے مژگانِ ہرغزال
صحرا میں تیز ناخنِ ضیغم سے کم نہیں

ہوتی ہے جمعِ زر سے پریشانی آخرش !
دِرہم کی شکل صُورتِ دَرہَم سے کم نہیں

ساقی مِلے ہزار فلاطوُں ہیں خاک میں
جو خُم تہی ہے قالبِ آدم سے کم نہیں

اُس حُوروِش کا گھر مجھے جنّت سے ہے سَوا
لیکن،  رقیب ہو تو جہنّم سے کم نہیں

شورابۂ سرشک سے دھوتا ہُوں زخمِ دل
تیزاب میرے حق میں یہ مرہَم سے کم نہیں

ہاتھوں سے تیرے پارۂ الماس و زخمِ دل
مجھ کو تو جلوۂ گُل و شبنَم سے کم نہیں

سمجُھوں غنیمت اِس دمِ خنجر کو کیوں نہ میں
اِس بے کسی میں یہ، مجھے ہمدَم سے کم نہیں

اے ذوق کس کو چشم حقارت سے دیکھیے
سب ہم سے ہیں زیادہ، کوئی ہم سے کم

شیخ محمد ابراہیم ذوق

ﯾﮧ ﻣﺮﯼ ﺍَﻧﺎ ﮐﯽ ﺷﮑﺴﺖ ﮨﮯ،

ﯾﮧ ﻣﺮﯼ ﺍَﻧﺎ ﮐﯽ ﺷﮑﺴﺖ ﮨﮯ، ﻧﮧ ﺩﻭﺍ ﮐﺮﻭ ﻧﮧ ﺩﻋﺎ ﮐﺮﻭ
ﺟﻮ ﮐﺮﻭ ﺗﻮ ﺑﺲ ﯾﮧ ﮐﺮﻡ ﮐﺮﻭ , ﻣﺠﮭﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺣﺎﻝ ﭘﮧ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﻭ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﺍﯾﮏ ﺗﺮﮐﺶِ ﻭﻗﺖ ﮨﮯ , ﺍﺑﮭﯽ ﺍُﺱ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﮨﯿﮟ
ﮐﻮﺋﯽ ﺗﯿﺮ ﺗﻢ ﮐﻮ ﻧﮧ ﺁ ﻟﮕﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺯﺧﻢِ ﺩﻝ ﭘﮧ ﻧﮧ ﯾﻮﮞ ﮨﻨﺴﻮ
ﻧﮧ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﮦ ﮐﻦ ﮨﻮﮞ، ﻧﮧ ﻗﯿﺲ ﮨﻮﮞ، ﻣﺠﮭﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﺎﻥ ﻋﺰﯾﺰ ﮨﮯ
ﻣﺠﮭﮯ ﺗﺮﮎِ ﻋﺸﻖ ﻗﺒﻮﻝ ﮨﮯ، ﺟﻮ ﺗﻤﮭﯿﮟ ﯾﻘﯿﻦِ ﻭﻓﺎ ﻧﮧ ﮨﻮ
ﺟﻮ ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺷﮑﻮﮎ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﯾﮧ ﻋﮩﺪ ﻧﺎﻣﮯ ﻓﻀﻮﻝ ﮨﯿﮟ
ﺟﻮ ﻣﺮﮮ ﺧﻄﻮﻁ ﮨﯿﮟ ﭘﮭﺎﮌ ﺩﻭ، ﯾﮧ ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﺧﻂ ﮨﯿﮟ ﺳﻤﯿﭧ ﻟﻮ
ﺟﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺳﺘﺎﺋﮯ ﮔﺎ ﺗﻮ ﮔﻠﮧ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﻧﭩﻮﮞ ﺗﮏ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ
ﯾﮧ ﺗﻮ ﺍﮎ ﺍﺻﻮﻝ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ، ﺟﻮ ﺧﻔﺎ ﮨﮯ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﮨﻮ
ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺏ ﺻﺪﺍﺋﻮﮞ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﮨﮯ، ﻣﺠﮭﮯ ﺧﺎﻝ ﻭ ﺧﺪ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﻧﮩﯿﮟ
ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﻓﺮﯾﺐ ﺳﮯ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﯾﮧ ﻧﻘﺎﺏ ﺍﺏ ﺗﻮ ﺍُﺗﺎﺭ ﺩﻭ
ﻣﺠﮭﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻓﻘﺮ ﭘﮧ ﻧﺎﺯ ﮨﮯ، ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﮐﺮﻡ ﮐﯽ ﻃﻠﺐ ﻧﮩﯿﮟ
ﻣﯿﮟ ﮔﺪﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮞ ﻓﻘﯿﺮ ﮨﻮﮞ، ﯾﮧ ﮐﺮﻡ ﮔﺪﺍﺋﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﻧﭧ ﺩﻭ
ﯾﮧ ﻓﻘﻂ ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﺎ ﻣﺮﺍ ﻣﺨﺘﺼﺮ ﺳﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﮨﮯ
ﯾﮧ ﮔﻠﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ، ﺧﻠﻮﺹ ﮨﮯ، ﻣﺮﯼ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﺎ ﺍﺛﺮ ﻧﮧ ﻟﻮ
ﯾﮧ ﺍﺩﮬﻮﺭﮮ ﭼﺎﻧﺪ ﮐﯽ ﭼﺎﻧﺪﻧﯽ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﯼ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﮐﻢ ﻧﮩﯿﮟ
ﮐﮩﯿﮟ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺳﺎﺗﮫ ﻧﮧ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﮮ، ﺍﺑﮭﯽ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﮨﮯ ﭼﻠﮯ ﭼﻠﻮ

چھپاؤں کیوں نہ دل میں خاتم گوہر نگار اس کی

چھپاؤں کیوں نہ  دل میں خاتم گوہر نگار اس کی
یہی لے دے کے میرے پاس ہے اک یادگار اس کی

یہ تنہائ میں میرے لب تک آکر مسکراتی ہے
اور اپنی مالکہ کی طرح دل کو گدگداتی ہے

ظلم کے ساتھ میرے ہاتھ میں ہر وقت رہتی ہے
اور اس کے دست رنگین کے فسانے مجھ سے کہتی ہے

طلائی انگلیوں کا جب مجھے قصہ سناتی ہے
قصور میں ستاروں کے سے پیکر کھینچ لاتی ہے

مری سلمی کو اس نے شاد اور ناشاد دیکھا ہے
گہے مسرور گاہے مائل فریاد دیکھا ہے

اسے معلوم ہیں اچھی طرح بے تابیاں اس کی
نہیں پوشیدہ اس کی آنکھ سے بے خوابیاں اس کی

شب تنہائی میں اس نے اسے بیدار پایا ہے
اور اکثر دیدہ سرشار کو خونبار پایا ہے
کسی کے غم میں لطف زیست سے محروم رہتی تھی
مرا خط پڑھ کے وہ کس ناز سے مسرور ہوتی تھی

پھر اپنی بے بسی پر کس طرح رنجور ہوتی تھی

یہ شاہد ہے کہ اس کی شام غم کیوں کر گزرتی تھی
یہ شاہد ہے کہ وہ رو رو کے کیوں کر صبح کرتی تھی

وہ جب دل تھام لیتی تھی ہجوم غم سے گھبرا کر
تو یہ کرتی تھی اس کی غمگساری دل کے پاس آکر

اسے معلوم ہے جو درد تھا اس پاک سینے میں
بسی ہیں اس کے دل کی دھڑکنیں اس کے نگینے میں

پہنچتی ہیں شعاعیں اس کی جس دم چشم حیراں تک
تصور مجھ کو لے اڑتا ہے سلمیٰ کے شبستاں تک

جہاں سلمیٰ کے اور میرے سوا ہوتا نہیں کوئی
انگوٹھی کھوئی جاتی ہے مگر کھوتا نہیں کوئی

اختر شیرانی

ایسی کی تیسی

ایسی کی تیسی
_________________________
مزاجِ یار کی ایسی کی تیسی
اور اس پندار کی ایسی کی تیسی

ترے گیسو نشانِ تیرگی اور
ترے رخسار کی ایسی کی تیسی

نگاہِ ناز پہ سو بار تف ہو
لبِ خمدار کی ایسی کی تیسی

غزل میں اب نئے مضمون لاو
گل و گلزار کی ایسی کی تیسی

جہاں پر جنسِ الفت بک رہی ہے
ترے بازار کی ایسی کی تیسی

میں سچی بات کہنے جارہا ہوں
رسن کی ،دار کی ایسی کی تیسی

امیرِ شہر کی شاہی پہ لعنت
بھرے دربار کی ایسی کی تیسی

منقول

ﺗﺠﮫ ﮐﻮ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ

ﺗﺠﮫ ﮐﻮ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ۔۔۔۔۔ ﺗﺠﮫ ﮐﻮ ﺑﮭﻼ ﮐﯿﺎ ﻣﻌﻠﻮﻡ
ﺗﯿﺮﮮ ﭼﮩﺮﮮ ﮐﮯ ﯾﮧ ﺳﺎﺩﮦ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﻮﺗﮯ ﺳﮯ ﻧﻘﻮﺵ
ﻣﯿﺮﮮ ﺗﺨﯿﻞ ﮐﻮ ﮐﯿﺎ ﺭﻧﮓ ﻋﻄﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺗﯿﺮﯼ ﺯﻟﻔﯿﮟ ۔۔۔۔۔ ﺗﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ۔۔۔۔۔۔ ﺗﯿﺮﮮ ﻋﺎﺭﺽ ۔۔۔۔۔ ﺗﯿﺮﮮ ﮨﻮﻧﭧ
ﮐﯿﺴﯽ ﺍﻧﺠﺎﻧﯽ ﺳﯽ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺧﻄﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺧﻠﻮﺕ ﺑﺰﻡ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺟﻠﻮﺕ ﺗﻨﮩﺎﺋﯽ ﮨﻮ
ﺗﯿﺮﺍ ﭘﯿﮑﺮ ﻣﯿﺮﯼ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺍُﺗﺮ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ
ﮐﻮﺋﯽ ﺳﺎﻋﺖ ﮨﻮ ۔۔۔۔۔ ﮐﻮﺋﯽ ﻓﮑﺮ ﮨﻮ ۔۔۔۔۔۔ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺎﺣﻮﻝ
ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﮨﺮ ﺳﻤﺖ ﺗﯿﺮﺍ ﺣﺴﻦ ﻧﻈﺮ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ
ﭼﻠﺘﮯ ﭼﻠﺘﮯ ﺟﻮ ﻗﺪﻡ ﺁﭖ ﭨﮭﭩﮭﮏ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺳﻮﭼﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﻧﮯ ﭘﮑﺎﺭﺍ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ
ﮔﻢ ﺳﯽ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﻧﻈﺮﯾﮟ ﺗﻮ ﺧﯿﺎﻝ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ
ﺍِﺱ ﻣﯿﮟ ﭘﻨﮩﺎﮞ ﺗﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﺷﺎﺭﮦ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ
ﺩﮬﻮﭖ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮔﺮﯾﺰﺍﮞ ﺟﺲ ﺩﻡ
ﺗﯿﺮﯼ ﺯﻟﻔﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﺷﺎﻧﻮﮞ ﭘﺮ ﺑﮑﮭﺮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ
ﺗﮭﮏ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺳﺮ ﮐﺴﯽ ﭘﺘﮭﺮ ﭘﯽ ﭨﮑﺎ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﻮﮞ
ﺗﯿﺮﯼ ﺑﺎﻧﮩﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ ﮔﺮﺩﻥ ﻣﯿﮟ ﺍُﺗﺮ ﺁﺗﯽ ﮨﯿﮟ
ﺳﺮِ ﺑﺎﻟﯿﮟ ۔۔۔۔۔ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﮨﮯ ﺑﮍﮮ ﭘﯿﺎﺭ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ
ﻣﯿﺮﮮ ﺑﮑﮭﺮﮮ ﮨﻮﺋﮯ ۔۔۔۔۔۔ ﺍُﻟﺠﮭﮯ ﮨﻮﺋﮯ ۔۔۔۔۔۔ ﺑﺎﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ
ﺍﻧﮕﻠﯿﺎﮞ ﭘﮭﯿﺮﺗﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ۔۔۔۔۔ ﺑﮍﮮ ﭘﯿﺎﺭ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ
ﮐﺲ ﮐﻮ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺧﻮﺍﺑﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﮨﮯ ﮐﯿﺎ
ﮐﻮﻥ ﺟﺎﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﻏﻢ ﮐﯽ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ؟؟؟
ﻣﯿﮟ ﺳﻤﺠﮫ ﻟﻮﮞ ﺑﮭﯽ ﺍﮔﺮ ﺍِﺱ ﮐﻮ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺎ ﺟﻨﻮﮞ
ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺍِﺱ ﻋﺸﻖ ﺟﻨﻮﮞ ﺧﯿﺰ ﺳﮯ ﻧﺴﺒﺖ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ، !!!